اگلا صفحہ پچھلا صفحہ

"بجلی کا بحران، عوام پریشان" پر مزید کوریج

یکم اکتوبر سے بجلی کے نرخ میں اضافے کا امکان:
اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔27 ستمبر ۔2009ء) یکم اکتوبر سے بجلی کے نرخوں میں چھ فیصد اضافہ کا خدشہ ہے جبکہ صنعتکاروں نے بجلی کی قیمتوں میں اضافے کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت کے اس اقدام سے مقامی صنعت تباہی کا شکار ہو جائے گی۔ آئی ایم ایف پروگرام کی شرائط کے تحت یکم اکتوبر سے بجلی کے نرخوں میں چھ فیصد اضافہ کا خدشہ ہے۔ وزارت پانی و بجلی کے ذرائع نے بتایا ہے کہ بجلی کے نرخوں میں اضافے کا حتمی فیصلہ وزیراعظم کی منظوری سے کیا جائے گا۔ یکم اکتوبر سے بجلی کے نرخ چھ فیصد بڑھنے سے حکومت کو اڑتیس ارب روپے اضافی وصول ہوں گے جبکہ یکم جنوری اور یکم اپریل سے بجلی کے نرخوں میں بالترتیب دس اور چھ فیصد اضافہ کیا جائے گا۔دوسری جانب صنعتکاروں نے بجلی کی قیمتوں میں اضافے کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت بجلی کی قیمتیں مزید بڑھانے کے بجائے ملک بھر میں تین سو ارب روپے کی چوری اور لائن لاسز کو کنٹرول کرے تو بجلی تین روپے فی یونٹ سستی ہو سکتی ہے۔ صنعتکاروں کا کہنا ہے کہ بجلی کی قیمتیں مزید بڑھانے سے مقامی صنعت تباہ ہو جائے گی اور بے روزگاری اور مہنگائی میں مزید اضافہ ہو گا جس سے حکومت کے لیے مسائل پیدا ہوں گے۔


27/09/2009 12:05:50 : وقت اشاعت
پچھلی خبر مركزی صفحہ اگلی خبر
تمام خبریں
یہ صفحہ اپنے احباب کو بھیجئیے
محفوظ کیجئے
پرنٹ کیجئے