اگلا صفحہ پچھلا صفحہ

"بجلی کا بحران، عوام پریشان" پر مزید کوریج

ملک بھر میں بجلی کا شدید بحران جاری، شارٹ فال 5000 میگا واٹ ہو گیا:
اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین ۔22مارچ۔ 2010ء)ملک میں کئی روزسے جاری بجلی کے بحران میں کوئی کمی نہیں آسکی اورشارٹ فال پانچ ہزار میگاواٹ ہو گیا ہے، جس سے گھریلو اورصنعتی صارفین شدید مشکلات کا شکارہیں۔ دوسری طرف بجلی کی بندش سے لوگوں کو پانی کی قلت کا بھی سامنا ہے۔ حکومت کے واضح احکامات کے باوجود وزارت پانی و بجلی اور پیپکو اپنے تھرمل پاورہاوٴسز نہیں چلا سکے جس کی وجہ ان پاور ہاوٴسز کے اربوں روپے کے واجبات اورفرنس آئل کی عدم فراہمی ہے۔ وزارت پانی و بجلی کے ذرائع کا کہنا ہے کہ پیپکو اپنی ناکامی چھپانے کے لئے غلط بیانی کر رہا ہے۔ ہائیڈل پیداوار میں زیادہ کمی نہیں ہوئی جب کہ پیپکوکے اپنے پاورہاوٴسزتیسرے روزبھی بند ہیں۔ لاہور سمیت تمام شہروں میں گیارہ گھنٹے تک کی غیراعلانیہ جبکہ چھوٹے شہروں اور دیہات میں سولہ سے بیس گھنٹے کی لوڈ شیڈنگ معمول بن گئٍی ہے جس سے صارفین کو سخت دشواری کا سامنا ہے، جب کہ ملک کی چھوٹی بڑی انڈسٹری تباہی کے دہانے پر پہنچ گئی ہے۔ پیپکو ذرائع کا کہنا ہے کہ اعلی سطحی اجلاس بلایا گیا ہے جس میں پیپکو یہ اعتراض اٹھائے گا کہ ریجنل کنٹرول سنٹر اسلام آباد کے بجائے ڈسٹری بیوشن کمپنیاں ہی لوڈشیڈنگ کریں کیونکہ جبری اوراضافی کئی گھنٹے لوڈشیڈنگ کرنے سے عوام میں زیادہ غم و غصہ پایا جا رہا ہے۔

22/03/2010 14:17:40 : وقت اشاعت
پچھلی خبر مركزی صفحہ اگلی خبر
تمام خبریں
یہ صفحہ اپنے احباب کو بھیجئیے
محفوظ کیجئے
پرنٹ کیجئے