اگلا صفحہ پچھلا صفحہ

"بجلی کا بحران، عوام پریشان" پر مزید کوریج

غیراعلانیہ لوڈشیڈنگ کیخلاف پنجاب بھر کی طرح چنیوٹ میں بھی پوراشہرسراپااحتجاج بن گیا:
چنیوٹ(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔21جولائی ۔2009ء) غیراعلانیہ لوڈشیڈنگ کیخلاف پنجاب بھر کی طرح چنیوٹ میں بھی پوراشہرسراپااحتجاج بن گیا شہر کے تمام بازاروں، مارکیٹوں اورتجارتی اداروں نے مکمل شٹرڈاؤن کیا ہزاروں افراد نے زبردست جلوس نکالا لوگ حکومت کیخلاف زبردست نعرہ بازی کرتے ہوئے بادشاہی مسجد چنیوٹ سے ہوتے ہوئے مختلف بازاروں سے گزرتے ہوئے تحصیل چوک پہنچے تو ڈنڈہ بردار نوجوانوں نے ٹائروں کو آگ لگا کرٹریفک بلاک کردی جلوس کی قیادت جمیل فخری انجمن تاجران، حاجی محمد اشرف انجمن آڑھتیاں ،نسیم فخری خالد ٹی او کے علاوہ دیگر افراد نے کی مشتعل جلوس تحصیل چوک سے بھاگتا ہوا چنیوٹ کے بجلی گھرجاپہنچا اور انہوں نے جاتے ہی بجلی کے گھرکے بند دفتر کے گیٹ کو توڑ ڈالا اورواپڈا دفتر پر زبردست پتھراؤ کیا اور واپڈا آفس کے تمام کمروں کے شیشے چکناچور کردیے اورفرنیچر کی توڑ پھوڑ کی اوردفتروں سے تمام ریکارڈ نکال کر اسے لان میں رکھ کر آگ لگادی جبکہ توڑ پھوڑ جاری رہی اسی اثناء میں ڈی ایس پی مہرربنواز بھاری نفری کے ہمراہ وہاں پہنچ گئے اورجلوس کے مشتعل شرکاء کو سمجھاتے رہے لیکن مشتعل افراد نے ایک نہ سنی اور پولیس پر بھی پتھراؤ کیا جس کے نتیجے میں ڈی ایس پی چنیوٹ کا ریڈرمرتضی پرل ایچ سی اورپولیس کانسٹیبل شدید زخمی ہوگئے جنہیں فوری طورپر طبی امداد کیلئے ہسپتال پہنچایا اور پولیس نے بازنہ آنے والے افراد پر اہلکار لاٹھی چارج کیا لیکن مشتعل جلوس پھر بھی واپڈاآفس پرپتھراؤ کیا اسی طرح پولیس اور جلوس کے درمیان دو گھنٹے تک آنکھ مچولی ہوتی رہی معلوم ہواہے کہ بجلی گھر کی توڑ پھوڑ سے دس کروڑ کے نقصان کاخدشہ ہے شرکاء نے کمپیوٹر بھی توڑ دیے۔

21/07/2009 17:54:56 : وقت اشاعت
پچھلی خبر مركزی صفحہ اگلی خبر
تمام خبریں
یہ صفحہ اپنے احباب کو بھیجئیے
محفوظ کیجئے
پرنٹ کیجئے