اگلا صفحہ پچھلا صفحہ

"بجلی کا بحران، عوام پریشان" پر مزید کوریج

منگلا پاور ہاؤس:فنی خرابی دور کرنے کیلئے کئی دن درکار،ملک میں بجلی کا شارٹ فال 4400 میگاواٹ تک پہنچ گیا:
کراچی(اُردو پوائنٹ تازہ ترین۔30جون 2009 ء) منگلا پاور ہاؤس میں فنی خرابی دور ہونے میں کئی دن لگ سکتے ہیں،ایک ہفتے بعد دو سو سے ڈھائی سو میگاواٹ بجلی بحال کردی جائے گی۔ منگلا ڈیم میں اس وقت دس یونٹس ہیں جن سے تقریبا گیارہ سو میگاواٹ بجلی پیدا کی جارہی ہے تاہم اتوار کی رات تین انڈر گراونڈ یونٹس کے کیبلز میں آگ لگی تھی اور یہ یونٹس بند ہوگئے تھے جبکہ انتظامیہ کو باقی سات یونٹس بچانے کے لیے بجلی کی مکمل سپلائی بند کرنا پڑی۔انیس سو سڑسٹھ سے قائم پاور اسٹیشنز کی تاریں بوسیدہ اور خستہ حال ہوچکی ہیں لیکن انہیں ابھی تک تبدیل نہیں کیاگیا۔یہ بوسیدہ کیبلز آئندہ کسی بڑے حادثے کا سبب بن سکتے ہیں۔ واپڈا ذرائع نے یہ تصدیق کرلی ہے کہ ایک ہفتے تک مکمل بجلی کی بحالی ناممکن ہے۔ ایک ہفتے بعد تقریبا دو سے ڈھائی سو میگاواٹ بجلی کی سپلائی کی جاسکے گی، مکمل سپلائی میں کئی دن لگ سکتے ہیں۔ آگ لگنے کی اصل وجہ شدید گرمی، بجلی کا اوور لوڈ اور ناقص میٹیریل ہے۔ دوسری جانب منگلا پاور ہاوس سے بجلی کی پیداوار چھتیس گھنٹے گزرنے کے باوجود شروع نہ ہوسکی۔ جبکہ ملک میں بجلی کا شارٹ فال چار ہزار چار سو میگا واٹ سے تجاورز کرگیا ہے۔طویل اور غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ نے عوام کی زندگی اجیرن بنادی ہے۔

30/06/2009 11:00:23 : وقت اشاعت
پچھلی خبر مركزی صفحہ اگلی خبر
تمام خبریں
یہ صفحہ اپنے احباب کو بھیجئیے
محفوظ کیجئے
پرنٹ کیجئے