بند کریں
شاعری احمد راہیکوئی حسرت بھی نہیں

(256) ووٹ وصول ہوئے