بند کریں
شاعری اعتبار ساجدجی چاہتا ہے کوئی سخن آشنا

(199) ووٹ وصول ہوئے