بند کریں
شاعری اعتبار ساجدکوئی بات کرنی ہے چاند سےچاہتوں کے بے ثمر بے سود خوابوں

(225) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان