بند کریں
شاعری اعتبار ساجد

کوئی تو تھا پس ہوا

-

Koye to tha pass


(225) ووٹ وصول ہوئے