بند کریں
شاعری اختر شیرانی

آرزو وصل کی رکھتی ہے پریشاں کیا کیا

-

arzo wasaal ki rakhti hai pareshaan


(273) ووٹ وصول ہوئے