بند کریں
شاعری اختر شیرانیآرزو وصل کی رکھتی ہے پریشاں کیا کیا

(273) ووٹ وصول ہوئے