بند کریں
شاعری عاکف غنیدل سمندر تھا لیکن یہ تشنہ لبی

(219) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان