بند کریں
شاعری علی یاسر

ترک بادہ بھی نہیں کر سکتے

-

tarke badah bhi nahi


(255) ووٹ وصول ہوئے