بند کریں
شاعری امجد اسلام امجداتنے خواب کہاں رکھوں گا صدائے آشنا

(286) ووٹ وصول ہوئے