بند کریں
شاعری عارف شفیق

بات کرنے کی بھی آزادی گئی

-

bat karny ki bhi azadi gai


(163) ووٹ وصول ہوئے