بند کریں
شاعری عارف شفیق

باتیں تو ہزاروں ہیں ملوں بھی تو کہوں کیا

-

baten to hazaroon hain miloon bhi to kahon kia


(177) ووٹ وصول ہوئے