بند کریں
شاعری عارف شفیقباتیں تو ہزاروں ہیں ملوں بھی تو کہوں کیا

(177) ووٹ وصول ہوئے