بند کریں
شاعری عارف شفیقاتنے فریب کھائے کہ چالاک ہو گیا

(171) ووٹ وصول ہوئے