بند کریں
شاعری عارف شفیق

کھلے گا پھر ترا کردار دریا

-

kholy ga pher tera kardar darya


(190) ووٹ وصول ہوئے