بند کریں
شاعری عارف شفیقکھلے گا پھر ترا کردار دریا

(190) ووٹ وصول ہوئے