بند کریں
شاعری ارشد شاہیندل دہلتا جائے ہے اور سانس رکتا جائے ہے

(236) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان