بند کریں
شاعری ارشد شاہیننگاہوں میں جو رہتا تھا وہ چہرہ اب نہیں ہوتا

(321) ووٹ وصول ہوئے