بند کریں
شاعری عطا شادوہ گل ہے اسے پردہ خاشاک نہ پہنا

(257) ووٹ وصول ہوئے