بند کریں
شاعری ایاز محمود ایازغموں میں ڈھال گیا لوٹ کر نہیں آیا

(382) ووٹ وصول ہوئے