بند کریں
شاعری ایاز محمود ایازکیا لطف کہ وہ ظلم بھی جاری نہیں رکھتے

(438) ووٹ وصول ہوئے