بند کریں
شاعری فیض احمد فیض

کبھی کبھی یاد میں ابھرتے ہیں نقش ماضی مٹے مٹے سے

-

Kabhi kabhi yaad


(264) ووٹ وصول ہوئے