بند کریں
شاعری فیض احمد فیض

تری امید ترا انتظار جب سے ہے

-

tere umeed tera intezar jab se hai


(881) ووٹ وصول ہوئے