بند کریں
شاعری فیضان عارفلب ساحل کوئی پیاسا کھڑا ہے

(232) ووٹ وصول ہوئے