بند کریں
شاعری فیضان عارف

ٹوٹ جائے نہ کہیں اتنا بھی حساس نہ بن

-

toot jaye na kahin itna bhi


(232) ووٹ وصول ہوئے