بند کریں
شاعری فاخرہ بتولچاند نے بادل اوڑھ لیا

اس کو جو کہنا تھا پل میں کہہ گیا

-

Is ko jo kehna tha


(246) ووٹ وصول ہوئے