بند کریں
شاعری فرحت عباس شاہ

کہاں دل قید سے چھوٹا ہوا ہے

-

Kahan dil qaid sey


(238) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان