بند کریں
شاعری فاطمہ اسد نقویپہلے سے زندگی کے سہارے نہیں رہے

(222) ووٹ وصول ہوئے