بند کریں
شاعری فراق گورکھپوری

مرد حق پیشہ کو پھر دارو رسن پر کھینچا

-

Mard haq


(251) ووٹ وصول ہوئے