بند کریں
شاعری فراق گورکھپوریطبع مضطر سنبھل نہ جاءے کہیں

(240) ووٹ وصول ہوئے