بند کریں
شاعری فراق گورکھپوریترا جمال بھی ہے آج ایک جہاں فراق

(337) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان