بند کریں
شاعری حفیظ جالندھریاب وہ نوید ہی نہیں صوت ہزار کیا کرے

(342) ووٹ وصول ہوئے