بند کریں
شاعری ادریس بابردل کوئی آئنہ نہیں ، ٹوٹ کے رہ گیا تو پھر؟

(171) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان