بند کریں
شاعری ادریس بابرخیمگی شب ہے ، تشنگی دن ہے

(183) ووٹ وصول ہوئے