بند کریں
شاعری اقبال نوید

رات بھر کوئی نہ دروازہ کھلا

-

raat bhar koi na darwaza khula


(163) ووٹ وصول ہوئے