بند کریں
شاعری اقبال نویدرات بھر کوئی نہ دروازہ کھلا

(163) ووٹ وصول ہوئے