بند کریں
شاعری کاشف کمال

دریا تو سامنے ہے کنارا نہیں رہا

-

darya tu samne hai kinara nahi raha


(137) ووٹ وصول ہوئے