بند کریں
شاعری کاشف کمالکوئی شجر بھی سرِ رہگزار تھا ہی نہیں

(335) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان