بند کریں
شاعری کاشف کمال

کوئی شجر بھی سرِ رہگزار تھا ہی نہیں

-

koi shajar bhi sar e rahguzar tha hi nahi


(335) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان