بند کریں
شاعری کاشف کمال

زخم پر زخم کھائے جاتے ہیں

-

zakham per zakham khaye jate hain


(580) ووٹ وصول ہوئے