بند کریں
شاعری خالد علیم

میری وحشت کے لئے چشم تماشا کم ہے

-

mere wehshaat k liye chasam tamasha kaam hai


(350) ووٹ وصول ہوئے