بند کریں
شاعری خالد شریف

نارسائی ہے کہ تو ہے کیا ہے

-

na rasayi hai


(307) ووٹ وصول ہوئے