بند کریں
شاعری خالد شریفناکام حسرتوں کے سوا کچھ نہیں رہا

(373) ووٹ وصول ہوئے