بند کریں
شاعری خواجہ میر درددیوان درددل تو سمجھائے سمجھتا بھی نہیں

(234) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان