بند کریں
شاعری خواجہ میر درد

گھر تو دونوں پاس ہیں پر وہ ملاقاتیں کہاں

-

Ghar to dono pass hain


(229) ووٹ وصول ہوئے