بند کریں
شاعری محمد ابراہیم ذوقرکھتا بہر قدم ہے وہ مدہوش نقش پا

محمد ابراہیم ذوق

mohammad ibrahim zauq

(396) ووٹ وصول ہوئے