بند کریں
شاعری محسن نقویانا پہ چوٹ پڑے بھی تو کون دیکھتا ہے

(292) ووٹ وصول ہوئے