بند کریں
شاعری مرتضی اشعر

وہ ذرا انتطار کر لیتا

-

wo zaara intezar kar leta


(236) ووٹ وصول ہوئے