بند کریں
شاعری نجیب احمد

کھلونے ٹوٹ جاتے ہیں

-

khilone toot jate hain


(335) ووٹ وصول ہوئے