بند کریں
شاعری نجیب احمد

سر نیاز وہ سودا نظر نہیں آتا

-

sare nayaaz wo sawaad nazar nahi aata


(318) ووٹ وصول ہوئے