بند کریں
شاعری ناصر کاظمیچمن در چمن وہ رمق اب کہاں

(214) ووٹ وصول ہوئے