بند کریں
شاعری ناصر کاظمی

ختم ہوا تاروں کا راگ

-

Khatam hota tarron


(234) ووٹ وصول ہوئے